نود لفت انتباه الإخوة زوار الموقع ان هذه النسخة هي نسخة تجريبية للموقع بشكله الجديد , للابلاغ عن اخطاء من هنا

المطويات  (  امریکی مصنوعات کا بائیکاٹ ) 

Post
19-9-2012 1419  زيارة   

 


 

اسلامک سینٹر ’’ وذکر ‘‘ کی اپیل

نبی کریم حضرت محمد صلی اللہ علیہ وسلم کے دفاع میں تمام امریکی  مصنوعات کا بائیکاٹ

ارشاد باری تعالیٰ ہے: إِنَّ الَّذِينَ يُؤْذُونَ اللَّهَ وَرَسُولَهُ لَعَنَهُمُ اللَّهُ فِي الدُّنْيَا وَالآخِرَةِ وَأَعَدَّ لَهُمْ عَذَابًا مُّهِينًا [احزاب:57]

(جو لوگ اللہ اور اس کے پیغمبر صلی اللہ علیہ وسلم کواذیب پہنچاتے ہیں ان پر اللہ دنیا وآخرت میں لعنت کرتا ہے اور ان کے لیے اس نے ذلیل کرنے والا عذاب تیار کررکھا ہے۔)

اےمسلمانو! آپ جانتے ہیں کہ امریکا میں مقیم مصری قبطی  حاسدین  (جنھیں مہاجرین قبطی سے جانا جاتا ہے) نے  قرآن کریم کو نذرآتش کرنے کے اعلان کرنے والے امریکی مجرم پادری کے ساتھ مل کراسلام  اور مسلمانوں کے خلاف  شر انگیزی کی(اللہ کی ان پر لعنت ہو)، ان خبیثوں نے امریکا میں 9/11  کی یاد  کے موقع پر بنائی گئی توہین آمیز فلم میں ہمارے پیارے نبی ﷺ کو عوامی عدالت میں پیش کیا، مقدمہ کی سماعت کے ساتھ اس فلم کا آغاز ہوتا ہے، جس کا مقصد  9/11  کے حادثے کی جانب اشارہ کرنا ہے۔

اس فلم کو تیار کرنے کے لیے تین برس لگے، جس میں 104 مجرم اداکاروں نے بھاری رقم کے عوض شرکت کی، اس  کینہ پرور فلم کا مقصد ہمارے پیارے نبی ﷺ کی  سیرت  طیبہ کو ان کے خبیث اور گندے نہج کے مطابق پیش کرنا ہے، جس میں انھوں نے آپ ﷺ کے تعارف پیش کرنے میں سارے اخلاقی حدود کو پامال کیا،اور آپ ﷺ کو (نعوذباللہ) بد سے بد حال اور گھٹیا سے گھٹیا عبارتوں میں پیش کرنے کی جسارت کی(مستند صحافتی رپورٹس کے مطابق)، ان خبیثوں نےآپ ﷺ کی تصویر نعوذ باللہ ایسی پیش کی ہے: کہ آپ:

۱۔ ولد زنا ہے۔۔!! ۲۔ آپ ﷺ (اللہ کی پناہ) شہوت پرست  اور کم عمر لڑکیوں کے پاگل تھے۔۔!!

۳۔آپ ﷺ اپنی ازواج (مطہرات رضی اللہ عنہن) سے شدید شہوانی تعلق رکھتے تھے۔

۴۔آپ ﷺ لڑکوں سے جنسی تعلق رکھتے تھے۔۔کہ آپ نے (نعوذ باللہ) حضرت زیدبن حارثہ(رضی اللہ عنہ) کے ساتھ  غلط فعلی کی تھی۔

۵۔آپ (ﷺ) نے ایک شخص پر اس کی بیوی کے سامنے حملہ کیا اور اسے قتل کیا، تاکہ آپ کی  ازواج(رضی اللہ تعالیٰ عنہن) اس کا مشاہدہ کریں، پھر حفصہ اور عائشہ (رضی اللہ تعالیٰ عنہما) نے اس شخص کے ننگے بدن پر جوتے مارے۔

۶۔کہ آپ (ﷺ) حملہ آور ، بربری، وحشی اور خون کے پیاسے ہیں۔۔!! کہ آپ (ﷺ) اپنے صحابہ کو قتل، چوری، ڈاکہ، بچوں کے اغواء اور انھیں غلام بناکر فروخت کرنے کا حکم دیتے ہیں۔۔!!

۷۔ اس کے علاوہ بہت سارے گندے افعال پیش کیئے گئے ۔۔!! اخیرمیں فلم کا اختتام اس طرح ہوتا ہے کہ آپ (ﷺ)ایک غزوہ میں ہے ، آپ کے ہاتھوں میں تلوار ہے، جس سے خون ٹپک رہا ہے، آپ کا لباس  اور چہرہ انور خون سے لت پت ہے، آپ اپنے سامنے آنے والے ہر فرد کو ہلاک کرتے جاتے ہیں اور مسلمانوں کو اس کی تاکید کرتے ہیں۔۔!!

اے اللہ کے رسول  ﷺ کے چاہنے والو! یہ بزدل، گھٹیا ،کینہ پرور اور نچلے درجے کے لوگ جو چاہے کہیں ۔۔خدا کی قسم جس کے سوا کوئی معبود نہیں۔۔۔یہ خبیث افراد آپ ﷺ کی جوتی کو بھی غبار آلود نہیں کرسکتے۔۔پیارے نبی ﷺ سے مقابلے کرنے  کی اس گندے اور چھوٹے  شخص کی کیا اوقات۔

ایک اہم اشکال : ہمارے دین، قرآن اور پیارے نبی محمد ﷺ کی شان میں اس طرح کی بار بار  گستاخیوں کی آخر کیا وجہ ہے!!؟

جواب:

یہ مجرم اچھی طرح جانتے ہیں کہ وہ قانونی سزا سے محفوظ ہیں۔۔!! ان کی حکومتیں ان کو حوصلہ دیتی ہیں، بلکہ اس طرح کے جرم کے لیے ان کا تعاون ، حمایت اور ان کی  سرپرستی کرتی ہیں۔۔!!

ثانیا: آج مسلمانوں کا اللہ کے احکامات کو ترک کرنے کی وجہ سے: معتصم باللہ، صلاح الدین ایوبی یا ہارون رشید کی طرح کوئی خلیفہ۔۔امیر المومنین۔۔!! اور کوئی قائد ورہنما نہیں ہے ، کہ جو اللہ کے دین کے دفاع اور پیارے نبی حضرت محمد ﷺ کی نصرت کے لیے اٹھ کھڑا ہو۔۔

ثالثا: حکومت کے منہج وطریقہ کو  قابل نفرت  جمہوریت میں ڈھالا گیا۔۔!! اور اللہ تعالیٰ کے منہج وطریقے کو چھوڑا گیا۔۔!!

نتیجتاً:

حکمراں طبقہ آزادیِ رائے اور آزادیِ خیال کے نام پر ہمارے پیارے نبی ﷺ کی شان میں گستاخی کے خلاف کسی قسم کے شرعی موقف اختیار کرنے میں غفلت، لاپرواہی، چاپلوسی، بزدلی، ذلت اور رسوائی کے عادی  اور رسیا بن چکے ہیں۔ (انا للہ وانا الیہ راجعون)

اخیر میں:

اس سنگین جرم کے تئیں مسلمانان عالم کی کیا ذمہ داری ہے۔۔!!؟؟

اولا: قانونی طریقوں  کے ذریعے ان کینہ پرور مجرموں کو سزا دلائی جائےجنھوں نے ہمارے نبی حضرت محمد ﷺ کی شان میں گستاخی کی، اسی طرح ان لوگوں کو بھی سزا دی جائے جنھوں نے ان کی تائید وحمایت اور تعاون کیا۔ سزا کیا ہو؟ تلوار کے ذریعے ان کی گردن اڑائی جائے۔

اس سنگین اور بھیانک جرم پر اللہ تعالیٰ کا ان کے بارے میں یہی حکم ہے۔

ثانیا: خبیث اور قابل نفرت ڈیموکریٹک  اور دیگر قومی، وطنی،سرمایہ داری اور جمہوری خودساختہ قوانین پر عمل کرنا ترک کریں(جس کے بارے میں اللہ تعالیٰ نے کوئی دلیل نہیں اتاری)، یہی وہ طریقے ہیں جو اس طرح کے کینہ پرورمنافقین اور خبیثوں کو ہمارے دین اور ہمارے نبی محمد ﷺ کے خلاف زیادتی کرنے کی اجازت دیتے ہیں۔

ثالثا: سابق کی طرح خلافت اسلامیہ کو بروئے کار لانا اور اللہ کی شریعت کا نفاذ تاکہ مسلمانوں کو ان کی کھوئی ہوئی عزت، بزرگی اور ان کا مقام ومرتبہ دوبارہ حاصل ہو۔

رابعا: امریکی سامان کا بائیکاٹ: بائیکاٹ کا ہم آغاز سافٹ ڈرنک  اور امریکی ریسٹورنٹس  سے کریں اور  بائیکاٹ کا اختتام امریکی گاڑیوں، مصنوعات اور الیکٹرانک اشیاء پر کریں۔۔امریکی کمپنیوں کے ساتھ ہوئے معاہدوں کو ختم کریں، کیوں کہ اب وہ افلاس کے دھانے پر  کھڑے ہیں، امید ہے کہ ہمارا یہ اقدام اللہ کے حکم سے  فیصلہ کن ثابت ہوجائے۔

خامسا: تیل کا بائیکاٹ، اسی طرح ہر وہ چیز جس کے ذریعے ہم ان کا بائیکاٹ کرسکتے ہیں۔

سادسا: ان کے ممالک کی جانب سفر نہ کیا جائے۔

سابعا: شرعی طور پر مطلقا اس فلم کا دیکھنا جائز نہیں ہے۔

ثامنا: عالمی سطح پر دنیا کی تمام زبانوں میں نبی کریم ﷺ کا تعارف ،آپ کے منہج اور اخلاق پر مشتمل مہم چلائی جائے۔

سن لو میں نے پہنچادیا۔۔اے اللہ تو گواہ رہنا۔۔۔

خلاصہ کلام: اے اللہ کے نبی ﷺ  کے چاہنے والو! عظیم خوشخبری سن لو:

جب کفار نبی کریم ﷺ کو سب وشتم کرنے لگتے ہیں تو نصرتِ الہٰی قریب آجاتی ہے۔

ایک اللہ والے کا قول ہے: نبی کریم ﷺ کی شان اقدس میں گستاخی کا حادثہ  ان اقوام کی بربادی اور زوال کی خوشخبری  دیتا ہے۔

مسلمانوں نے جب ایک قلعہ کا  ایک مہینہ یا اس سے زیادہ مدت تک محاصرہ کیا تھا، اور مسلمان قریب تھا کہ  قلعہ کی فتح کے سلسلے میں مایوس ہوجاتے، (تاریخ کے مطابق) جب اہل قلعہ نے نبی کریم ﷺ کی شان میں گستاخی  کی ، تو مسلمانوں نے ایک دوسرے کو قلعہ کے فتح کی خوشخبریاں دینا شروع کردی اور اللہ کے حکم سے صرف ایک دن یا دو دن کے اند ر اندر مسلمان قلعہ فتح کرنے میں کامیاب ہوگئے۔۔اللہ اکبر۔۔!!

لہٰذا ہم نبی کریم ﷺ کے قول کے مطابق ان کینہ پرور مجرموں کے سلسلے میں اپنے دلوں کو غم وغصہ سے بھرا ہوا رکھتے ہیں۔۔ اوراب خوشخبری ہے عنقریب فتح کی۔

تحریر: آپ کا بھائی:

 ابوعبداللہ سید فؤاد بن سید عبدالرحمن الرفاعی الحُسینی

بروز ہفتہ، 28 / شوال، 1433 ھ مطابق ء 15/9/2012

اہم ملاحظہ:

اسلامک سینٹر ’’مرکزوذکر‘‘ نے سماجی ویب سائٹ ٹویٹر پرنبی کریم ﷺ کی جانب سے دفاع میں’’ عالمی محاذ نُصرت برائے نبی کریم حضرت محمد ﷺ ‘‘ بنایا ہے جس کا عنوان ہے:

nabbiomma

 


 


اضف تعليقك

تعليقات الزوار

لا يوجد تعليقات

روابط هامة


كن على تواصل


أوقات الصلاة



23 زيارة
|

30 زيارة
|

27 زيارة
|

جديد وذكر


استطلاع للرأي